نذرِ وطن

……… 1 ………

ارضِ پاک‘ اے وطن

مہرو ماہ سے حسیں ترے گلاب و یاسمن

تیرے پھول پھول پر فدا شفق کا بانکپن

ایک برگ کے عوض نہ لوں بہارِ صد چمن

تجھ میں خُلد کی پَھبَن

ارضِ پاک‘ اے وطن

……… 2 ………

ارضِ پاک‘ اے وطن

تیری خاک کیمیا تری گھٹائیں زرفشاں …

تیرے سنگ وخِشت بھی جواہرات سے گراں

زندگی ہیں قوم کی تری سنہری کھیتیاں

تو متاعِ جان و تن

ارضِ پاک‘ اے وطن

……… 3 ………

ارضِ پاک‘ اے وطن

علم و فن کا بوستاں ‘ لطافتوں کی سرزمیں

دینِ حق کا پاسباں ‘ صداقتوں کا تُوامیں

بے کسوں کے واسطے تو اک منارہِ یقیں

حُرّیت تراچلن

ارضِ پاک‘ اے وطن

……… 4 ………

ارضِ پاک‘ اے وطن

حفظِ امن کے لیے جوان سر بکف

غیر کی مجال کیا جو بڑھ سکے تری طرف

آندھیوں کی راہ میں ہیں کوہسار صف بہ صف

تو شکستِ اَہر مَن

ارضِ پاک‘ اے وطن

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s