غمِکوہکن

چار سُو آگ تھی نفرت کی لگائی ہوئی آگ

ہاں وہ آتش کدہِ‘ غیر سے لائی ہوئی آگ

جس نے کعبوں کو‘ کنشتوں کو بَھسَم کر ڈالا

جسم اور رُوح کے رشتوں کو بَھسَم کر ڈالا

میں نے اس آگ کو گُل زار بنانے کے لیے

دامنِ گُل کو شراروں سے بچانے کے لیے

دیدہِ شوق میں اشکوں کے سمندر پالے

قلبِ نادار میں داغوں کے نگینے ڈھالے

نہ ہوئے پر نہ ہوئے سرد جہنم کے شرار

مسکراتے رہے ذہنوں میں دھو ئں کے مینار

درمیانِ دل و جاں آگ کی دیوار رہی

زندگی کس کے لیے برسرِ پیکار رہی؟

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s