دوستو‘ پانی کبھی رکتا نہیں ڈھلوان پر

درد کے موسم کا کیا ہو گا اثر انجان پر
دوستو‘ پانی کبھی رکتا نہیں ڈھلوان پر
آج تک اس کے تعاقب میں بگولے ہیں رَواں
اَبر کا ٹکڑا کبھی برسا تھا ریگستان پر
میں جو پَربت پر چڑھا‘ وہ اور اُونچا ہو گیا
آسماں جُھکتا نظر آیا مجھے میدان پر
کمرے خالی ہو گئے‘ سایوں سے آنگن بھر گیا
ڈُوبتے سورج کی کرنیں جب پڑیں دالان پر
اب یہاں کوئی نہیں ہے‘ کس سے باتیں کیجیے
یہ مگر چُپ چاپ سی تصویر آتشدان پر
آج بھی شاید کوئی پھولوں کا تحفہ بھیج دے
تتلیاں منڈلا رہی ہیں کانچ کے گلدان پر
بس چلے تو اپنی عریانی کو اس سے ڈھانپ لوں
نیلی چادر سی تنی ہے جو کُھلے میدان پر
وہ خموشی انگلیاں چٹخا رہی تھی‘ اے شکیبؔ
یا کہ بوندیں بج رہی تھیں رات روشن دان پر
شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s