خاک بَسَر جاگے

صبح لیتی ہے انگڑائیاں گاؤں میں

پھر اُجالا ہوا پُرفشاں گاؤں میں

کل تلک جھاڑ جھنکار‘ گرد و غبار

آج پھل پھول پُھلواریاں گاؤں میں

ہر قدم پر اُگے ہیں ستاروں کے کھیت

ہر گلی بن گئی کہکشاں گاؤں میں

صاف شفّاف روشن خنک راستے

اُجلے اُجلے معطّر مکاں گاؤں میں

فصلِ گندم کے خوشے جواہر نگار

موتیوں کی کمی اب کہاں گاؤں میں

کُوبکُو خوشبوؤں کے حسیں قافلے

سُو بہ سُو دُودھ کی ندّیاں گاؤں میں

زندگی مانگتی ہے زمیں سے خراج

کوئی ذرّہ نہیں رائیگاں گاؤں میں

عزم و اخلاص کی زندہ تصویر ہیں

شوخ بانکے سجیلے جواں گاؤں میں

رہٹ گاتا ہے پائل کی جھنکار پر

رقص کرتی ہیں پنہاریاں گاؤں میں

شہر کی پُر تصنّع فضاؤں سے دُور

میری منزل ہے جنّت نشاں گاؤں میں

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s