جلوے کسی کے، میری نظر نے سنوار کے

آئینہِ جمال دکھایا نکھار کے
جلوے کسی کے، میری نظر نے سنوار کے
میں اوجِ کہکشاں سے بھی آگے نکل گیا
کچھ حوصلے بڑھے تھے مرے اعتبار کے
دیتا ہے ذرّہ ذرّہ چمن کا سبق ہمیں
شبنم مِٹی مگر گُل و ریحاں نکھار کے
گُل کو، چمن کو، سبزے کو، کہہ کر جُدا جُدا
انساں نے کردیے کئی ٹکڑے بہار کے
رنگینیِ حیات کا کیا تذکرہ، شکیبؔ
دُھندلے سے ہیں نقوش فریبِ بہار کے
شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s