اک چراغِ رہ گزر ہے جو مری منزل میں ہے

ایک ادنیٰ سی توجہ جو کسی کے دل میں ہے
اک چراغِ رہ گزر ہے جو مری منزل میں ہے
راستے کی کُلفتوں پر ہنس رہے ہیں آبلے
کون جانے لُطف کتنا دوریِ منزل میں ہے
ان کی تصویروں میں پاتا ہوں ابھی تک دل کشی
کچھ نہ کچھ احساس اپنا بھی کسی کے دل میں ہے
تلخیِ اَیّام سے گھبرا کے بُھولا تھا تمھیں
اب نہیں معلوم کیوں دل کا سکوں مشکل میں ہے
ہم کو جانے کیا سمجھ کر وہ بھلا بیٹھے، شکیبؔ
پھر بھی ان کی یاد جانے کیوں ہمارے دل میں ہے
شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s