اک بار قیدیوں پہ قیامت گزر گئی

جس دم قفس میں موسمِ گُل کی خبر گئی
اک بار قیدیوں پہ قیامت گزر گئی
دھند لا گئے نقوش تو سایہ سا بن گیا
دیکھا کیا میں ان کو، جہاں تک نظر گئی
بہتر تھا، مَیں جو دُور سے پُھولوں کو دیکھتا
چھونے سے پتّی پتّی ہَوا میں بکھر گئی
کتنے ہی لوگ صاحبِ احساس ہو گئے
اک بے نوا کی چیخ بڑا کام کر گئی
تنہائیوں کے شہر میں کون آئے گا، شکیبؔ
سو جاؤ، اب تو رات بھی آدھی گزر گئی
شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s