وہ آئینہ ہوں جسے روشنی ہی راس نہ ہو

کسی بھی رنگ کا، پیکر کا انعکاس نہ ہو
وہ آئینہ ہوں جسے روشنی ہی راس نہ ہو
مجھے تو ایسے ہراک آدمی پہ حیرت ہے
جو ایسے دور میں زندہ تو ہو، اُداس نہ ہو
اُس ایک رات کو یوں عمر پر محیط کیا
کہ جیسے پوری کہانی ہو، اقتباس نہ ہو
غزل میں رمز و کنایہ بہت ضروری ہے
یہی تو حسن ہے غم کا کہ بے لباس نہ ہو
یہ خود اذیتی یہ بے دلی یہ کم سخنی
یہ حال ہوتا جب رنج کا نکاس نہ ہو
عرفان ستار

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s