ہَر اِک زَخم دِیوارِ دِل پَر سَجا دُوں

وہ آئیں تَو سوچا ہے اُن کو سَزا دُوں
ہَر اِک زَخم دِیوارِ دِل پَر سَجا دُوں
پَسِ پَردہِ صَبر طُوفاں بَپا ہے
میں خُود ڈَر رَہا ہُوں قَیامَت نہ ڈھا دُوں
یہ دِل احتیاطوں کا مارا ہُوا ہے
کئی بار سوچا کہ سَب کچھ بتا دُوں
یہ ہوش و حَواس و یہ چیَن و سُکوں سَب
لُٹا دُوں لُٹا دُوں لُٹا دُوں لُٹا دُوں
یہ پہلے بھی گلشَن جَلا تَو چُکے ہیں
میں شُعلوں کو کیوں اَز سَرِ نَو ہَوا دُوں
مُکَمَّل سے شاید کہ شَرمندگی ہو
تُمہیں آؤ آدھی کہانی سُنا دُوں
اِشارے کِنائے سِکھائے ہیں کِس نے
کہو تَو میں سَب اَپنے احساں گِنا دُوں
وہ خاموش بیٹھے ہیں میں کہہ رَہا ہُوں
یہ تصویر دے دو میں دِل میں لگا دُوں
مِرے عشق سے ہے یہ سَب فتح مَندی
تِرے حُسن کو جَب میں چاہُوں ہَرا دُوں
فَقیروں کی بَستی سے آیا ہُوں ضامنؔ
اُنہیں کیا میں جس دَر پہ چاہُوں صَدا دُوں
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s