ہم نے بس ایک اِسی فن میں ریاضت کی ہے

جو بھی انسان ملا اُس سے محبت کی ہے
ہم نے بس ایک اِسی فن میں ریاضت کی ہے
اپنی تکمیل کی خاطر تمہیں چاہا سب نے
اور دعویٰ یہ کیا تم سے محبت کی ہے
کیسے پہچانوگے دیکھا ہی نہ ہو جس کو کبھی
کیا سمجھ پاؤگے سچائی جو چاہت کی ہے
بد گمانی کامرقع ہے وہ حسنِ خودبیں
اور اِدھر عشق کو ضد ہے تو صداقت کی ہے
لوگ نفرت علی الاعلان کِیا کرتے ہیں
ہم گنہگار ہوئے ہیں کہ محبت کی ہے
اُن کے محتاط تغافل کا سحر ہے ضامنؔ
بات دیوانگیٔ شوق کو حیرت کی ہے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s