ہمارے بارے میں کچھ کسی نے کہا سنا تھا تو ہم سے کہتے

زمانے بھر سے تھی کیا ضرورت جو دل دُکھا تھا تو ہم سے کہتے
ہمارے بارے میں کچھ کسی نے کہا سنا تھا تو ہم سے کہتے
ہمیشہ امکان کچھ نہ کچھ چاہتوں میں رہتا ہے رنجشوں کا
حضور آپس کی بات تھی کچھ برا لگا تھا تو ہم سے کہتے
ہماری کوشش سدا یہی تھی نمائشِ غم نہ ہو کبھی بھی
اگر کہیں کوئی پارۂ دل پڑا ملا تھا تو ہم سے کہتے
نظر نے تو اُن کی گفتگو ہم سے جب بھی موقع ملا بہت کی
زباں پہ لیکن اَنا نے پہرہ بٹھادیا تھا تو ہم سے کہتے
سوالِ الفت اُٹھانے والے جواب سن کر بہت ہیں برہم
اُنہی کا عکس آئینہ جب اُن کو دکھا رہا تھا تو ہم سے کہتے
روایتِ حسن کے تقاضوں سے ہم بھی اچّھی طرح ہیں واقف
کمان سے اُن کی تیر، ضامنؔ! نکل گیا تھا تو ہم سے کہتے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s