ہر ایک شخص مجھے آئینہ سا لگتا ہے

خیالِ یار میں ڈُوبا ہُوا سا لگتا ہے
ہر ایک شخص مجھے آئینہ سا لگتا ہے
ہجومِ غم میں ہمیں اے مُغَنّیِ ہستی
ہر ایک ساز ترا بے صدا سا لگتا ہے
وہ نام جس سے کہ رغبت نہیں رہی مجھ کو
زبانِ غیر پر اب بھی بُرا سا لگتا ہے
جہاں ہر ایک کی منزل جُدا ہو فکر جُدا
مجھے ہجوم تجھے قافلہ سا لگتا ہے
غزل میں جس کو تَخَلُّص کہا گیا ضامنؔ
کبھی کبھی مُجھے شورِ اَنا سا لگتا ہے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s