کچھ اثَر شاید دِکھایا آہِ بے تاثیر نے

دل کو جب تسلیم جاں کی عقلِ با تدبیر نے
تہنیت دی بڑھ کے دامِ حلقہِ زنجیر نے
یاس و حسرت، رنج و غم، سب لکھ دیے میرے لیے
کیا دیا اہلِ جہاں کو کاتبِ تقدیر نے
سُن کے ضامنؔ وہ مِرا احوال تھے تَو مضطرب
کچھ اثَر شاید دِکھایا آہِ بے تاثیر نے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s