ڈھونڈتے ہیں ناخدا و کشتی و ساحل مجھے

چشمِ حیرت بن کے دیکھے ہے مری منزل مجھے
ڈھونڈتے ہیں ناخدا و کشتی و ساحل مجھے
مشغلہ شوق و جنوں کا کامِ ذوقِ جستجو
صد منازل سے عزیز اِک سعیِ لا حاصل مجھے
ننگ ہے خوباں کا ہم کو اشتراکِ عنصری
اَور رُسوا کر رہے ہیں تیرے آب و گِل مجھے
میری طرح کب کسی نے پھر چڑھایا سَر اسے
ڈھونڈتی پھرتی ہے خاکِ کوچہِ قاتل مجھے
ضامنؔ! اُٹھتے جا رہے ہیں بیخودی میں خود قدم
لے کے جاتا ہے کہاں دیکھوں تَو میرا دل مجھے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s