چھُپا ہے کون وہاں ، کس کے قاتلوں میں سے ہے

چھَنا جو رنگِ شَفَق گَہرے بادلوں میں سے ہے
چھُپا ہے کون وہاں ، کس کے قاتلوں میں سے ہے
جو حُسن و عشق و تغزل کے کاملوں میں سے ہے
سُنا ہے چاند کو تکتا ہے باولوں میں سے ہے
امیرِ شہر نے رکھ دی نوازنے کی یہ شرط
ثبوت لاؤ کہ یہ شخص جاہلوں میں سے ہے
رکھا ہے خارِ تمنا کی تشنگی کے لئے
بچا جو آبلہ پاؤں کے آبلوں میں سے ہے
یہاں تو نطق و سَماعَت کا فاصلہ ضامنؔ
یہ لگ رہا ہے کہ صدیوں کے فاصلوں میں سے ہے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s