پہلے ہم سے عشق جتایا اب ہم کو بد نام کریں گے

وہ کہتے ہیں رازِ محبت آپ ہی طشت از بام کریں گے
پہلے ہم سے عشق جتایا اب ہم کو بد نام کریں گے
پڑھ تو لیا اقرارِ محبت آنکھوں میں بس کافی ہے!
حَرف و بیاں تک آئیں گے کیا؟ بات کو اب کیا عام کریں گے؟
میخانے میں بھیڑ ہے، آؤ! اَور کہیں پر بیٹھیں گے
کان کھنکتے بول سنیں گے، آنکھ سے رقصِ جام کریں گے
بسنے دو ہمارے دل میں تم اِن کالی کافر آنکھوں کو
گھر ہے خدا کا وہ خوش ہو گا کفر کو جب اسلام کریں گے
ضامنؔ! وہ مل جائیں کہیں تو کہنا ہم نے پوچھا ہے
کب تک آنکھ میں دم اٹکے گا کس دن پورا کام کریں گے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s