پھر نقشِ خوش خرامیِ تقدیر کھینچتے

گردن کا طوق پاؤں کی زنجیر کھینچتے
پھر نقشِ خوش خرامیِ تقدیر کھینچتے
دستِ دعا کو تھام لیا تم نے ورنہ ہم
حرفِ دعا کو تا دمِ تاثیر کھینچتے
سب کو یہ زعم تھا کہ تقدّس مآب ہیں
ہم کیوں حصارِ آیہِ تطہیر کھینچتے
اہلِ جنوں نے معرکے وہ سر کئے جہاں
اہلِ خِرَد کا کام تھا شمشیر کھینچتے
بہتر یہ ہوتا آپ کماں کھینچنے سے قبل
پہلی عنایتوں کے تو کچھ تِیر کھینچتے
کیسا نظامِ عدل میاں ! سُن لِیا کرو!
ہم در بہ در گئے ہیں یہ زنجیر کھینچتے
لے لے کے اُن کا نام مجھے دیکھتے ہیں لوگ
ایسے میں کاش وہ مری تصویر کھینچتے
خود سے نکل کے دیکھتے گر عکسِ حُسنِ یار
آئینے نقشِ حیرتِ تصویر کھینچتے
تِنکے نکالنے میں رہے چشمِ غیر سے
ضامنؔ! وہ اپنی آنکھ کا شہتیر کھینچتے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s