وہ بے گھری کہ جو ہوتی ہے گھر کے ہوتے ہُوئے

نہ سمجھے اہلِ نظر بھی نظر کے ہوتے ہُوئے
وہ بے گھری کہ جو ہوتی ہے گھر کے ہوتے ہُوئے
تلاشِ وسعتِ صحرا ہو نطق و لہجے کو
تَو کون بولے گا دِیوار و دَر کے ہوتے ہُوئے
تِرے جنوں میں یقیناً کمی رَہی ہو گی
جو سَر جھُکا دِیا سَودائے سَر کے ہوتے ہُوئے
اَزَل اَبَد کی نظر بندیاں معاذ اللہ
یہ اِک عذاب ہے ذَوقِ نظر کے ہوتے ہُوئے
حواس و ہوش سے ہَم کو شکایتیں کیسی؟
شکار ہو گئے ہَم بال و پَر کے ہوتے ہُوئے
ہَر ایک سانس میں ہے ایک دَشتِ تَنہائی
سَفَر میں رہتا ہُوں میں اَپنے گھر کے ہوتے ہُوئے
سُکونِ قَلب کو اِس اَنجمن سے کیا نِسبَت
بَھلا بَتائیے! اِس شور و شَر کے ہوتے ہُوئے
یہاں کے بعد وہاں کی بھی فکر ہے ضامنؔ
اِک اَور بوجھ ہے اِس بارِ سَر کے ہوتے ہُوئے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s