نہ کوئی داد نہ فریاد ماجرا کیا ہے

یہ حسن و عشق کا یک طرفہ سلسلہ کیا ہے
نہ کوئی داد نہ فریاد ماجرا کیا ہے
دل و نظر سے ہر اِک اختیار خود لے کر
وہ مجھ سے پوچھ رہا ہے کہ فیصلہ کیا ہے
صدا پلٹ کے جو آئی ہے اِس میں حیرت کیا
شکستِ دل کے سِوا سنگ کی صدا کیا ہے
یہ سرزنش یہ تغافل یہ سب سر آنکھوں پر
مگر حضور! مرے درد کی دوا کیا ہے
تری نظر کے رویّوں کے نام ہیں ورنہ
حیات و موت کا آپس میں واسطہ کیا ہے
سنا ہے ہوتی تو ہے دل کو دل سے راہ ضرور
سمجھ تو وہ بھی رہا ہے مجھے ہُوا کیا ہے
وہ جانتا ہے تقاضائے مصلحت ضامنؔ
اُسے خبر ہے کہ اچھا ہے کیا برا کیا ہے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s