نظامِ ہستی رہے گا یوں ہی نکال لے کوئی راہ ساقی

قیودِ رسم و رواج سے کب ملی کسی کو پناہ ساقی
نظامِ ہستی رہے گا یوں ہی نکال لے کوئی راہ ساقی
ملے گی اُن کو جو ہیں تہی ظرف اگر یہی رسمِ میکَدہ ہے
تَو تیری محفل تجھے مبارک نہ ہو گا اپنا نباہ ساقی
کہاں پہ ناز و ادا ہیں اچّھے کہاں پہ ہے احتیاط بہتَر
ہمِیں سے آدابِ بزم سیکھے ہمِیں سے پرہیز واہ ساقی
یہ کون پیرِ مغاں ہے یارو؟ عجیب حالت ہے میکَدے کی
نگوں ہیں ساغر، خموش مِینا، اُداس رند و تباہ ساقی
نہ بدگماں ہو ہم اہلِ دِل سے کہ اِس تِری بزمِ حُسن میں بھی
بہت سے ہوں گے ہمارے ضامنؔ بہت سے ہوں گے گواہ ساقی
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s