مُجھ سا کیا اَفلاک پَر کوئی نہ تھا

کیا ہُوا کیوں چاک پَر کوئی نہ تھا
مُجھ سا کیا اَفلاک پَر کوئی نہ تھا
طَے شُدہ تھی گُمرَہی شاید مِری
نقشِ پا تَک خاک پَر کوئی نہ تھا
بارہا میں جا کے سَرگَرداں رَہا
سَرحَدِ اِدراک پَر کوئی نہ تھا
بَھر لِیا بانہوں میں مِٹّی نے مُجھے
خاک تھی پِھر خاک پَر کوئی نہ تھا
بے رُخی پَر تھا مُجھے بَس اعتراض
لہجہَِ بیباک پَر کوئی نہ تھا
داغ جتنے بھی تھے ضامنؔ دِل پَہ تھے
دامَنِ صَد چاک پَر کوئی نہ تھا
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s