محض خیال سے آگے نکل رہا ہے کوئی

نشاطِ درد کا عنواں بدل رہا ہے کوئی
محض خیال سے آگے نکل رہا ہے کوئی
قیام لگتی ہیں ساری مسافتیں جب سے
ہر ایک سانس کے ہمراہ چل رہا ہے کوئی
مرے خیال کی زینت رہے گا ہر منظر
بدل کے دیکھ لے رُخ گر بدل رہا ہے کوئی
یہ بے کلی تَو تری انجمن کا ہے دستور
بھلا یہاں پہ کبھی ایک کل رہا ہے کوئی
وہ شخص قید ہوں میں جس کی ذات میں ضامنؔ
اُسے خبر ہی نہیں ہے سنبھل رہا ہے کوئی
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s