مبرّا داشتند از حاجتِ سیَرِ گلستانم

رہینِ التفاتِ شاہدانِ حشر سامانم
مبرّا داشتند از حاجتِ سیَرِ گلستانم
پسِ مردن نیارَد ہیچ بازَم با حیات آرَد
مسیحا خوب تر داند ہلاکِ زلفِ پیچانم
نَیَرزَد با یکے زینہا ہمہ حورانِ فردوسَت
بیا نظّارہ کن زاہد بہارِ نَو بہارانم
خرَد کَے بےوفائی کرد و کَے از کار ہوشم رفت
نمی دانم چنیں کردہ جمالِ دوست حیرانم
شکیب آموختم اَز شانِ استغنائے محبوباں
کُنوں اَز غر و غمزہ نیز درسِ بیخودی خوانم
نگہ دارَم زِ بُعدِ منزلِ جذب و فنا ضامنؔ
ہنوز اَز کوچَہِ جاناں حواس و ہوش میرانم
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s