سُنا ہے جگ ہنسائی ہو رہی ہے

یہ کس سے آشنائی ہو رہی ہے
سُنا ہے جگ ہنسائی ہو رہی ہے
تلاشِ بندگی میں تھک چکا ہوں
جہاں جاؤں خدائی ہو رہی ہے
کھڑے ہیں چلچلاتی دھوپ میں سب
دَرَختوں سے لڑائی ہو رہی ہے
ابھی تک رنگ بدلے تھے فَلَک نے
زمیں بھی اب پَرائی ہو رہی ہے
نہ منزل ہے نہ کوئی راہِ منزل
یہ کیسی رہنمائی ہو رہی ہے
نئے پنچھی گرفتارِ بلا ہیں
پُرانوں کی رہائی ہو رہی ہے
وہی سمجھائیں جا کر اُن کو ضامنؔ
وہی جن کی رَسائی ہو رہی ہے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s