زَخمِ دِل ایسے سُلَگتا نہیں دیکھا کوئی

اس طرح کا کبھی منظر نہیں دیکھا کوئی
زَخمِ دِل ایسے سُلَگتا نہیں دیکھا کوئی
نِذرِ گلچیں جو کرے شاخ سے خود توڑ کے گُل
باغباں ہم نے تَو ایسا نہیں دیکھا کوئی
آج ہم آپ کو آئینہ دِکھائیں گے ضرور
آپ نے حُسنِ سَراپا نہیں دیکھا کوئی
لگ نہ جائے کسی حاسِد کی نَظَر اِس لیے ہم
دِل میں کہہ لیتے ہیں تم سا نہیں دیکھا کوئی
کھیل اُلفَت کا بہت کھیلنے والے دیکھے
جان پر کھیلنے والا نہیں دیکھا کوئی
کیا شکایت وہ اندھیروں کی کرے گا ضامنؔ
عمر بھر جس نے اُجالا نہیں دیکھا کوئی
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s