داند چمن کہ من زِ رقیبَم رمیدہ اَم قطعہ فارسی

اے چشمِ انتظار صدائے شنیدہ اَم
دارم گمان مگر سرِ منزل رسیدہ اَم
زنہار باز می نہ رَوَم زین فضائے خوش
ایمن نشستہ ام زِ درونم رمیدہ اَم
آن بوئے خوش نَیَم کہ بمانم بہ قیدِ گُل
مِثلِ نسیمِ سَحَر بَہ ہر سُو وَزیدہ اَم
ضامنؔ ہزار لالہ و گُل عکسِ یار داشت
داند چمن کہ من زِ رقیبَم رمیدہ اَم
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s