دامانِ آرزو، مِرے دَستِ دُعا میں تھا

اِلزام تھا، ثبوت تھا، پھِر کیا سَزا میں تھا!
دامانِ آرزو، مِرے دَستِ دُعا میں تھا
خوش باش تھا میں فِکر و نظر کے جہان میں
عرشِ خیال کی اِک اَنوکھی فَضا میں تھا
وہ تَو گُناہ تھا ہی جو نِکلا زبان سے
وہ بھی گُنہ تھا جو مِرے ذہنِ رَسا میں تھا
یہ کہہ کے سَب نے مُلک بَدَر کَر دِیا مُجھے
جُراَت تَو دیکھیے! یہ صَفِ با وَفا میں تھا
میں زہر پی کے زندہ تھا لیکن مِرے طَبیِب
کیا جانے کیا مِلا ہُوا تیری دَوا میں تھا
اِس جُرم میں پکڑ کے سَزا دی گئی مجھے
ضامنؔ! میں سَنگِ میِل رَہِ اِرتِقا میں تھا
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s