جنونِ کوچَہِ جاناں ہے سَر فروشوں میں

ہے شور اہلِ محبّت کے عیب کوشوں میں
جنونِ کوچَہِ جاناں ہے سَر فروشوں میں
عجب نہیں ہے دیارِ خرَد کی ویرانی
یہ دَورِ رقصِ جنوں ہے تماش بینوں میں
نظر ہے حال پَہ کوئی نہ فکرِ آیندہ
بقا کا ذِکر بہت ہے فنا بدوشوں میں
کبھی رہے نہ خریدارِ عالَمِ فانی
ہمیَں شمار نہ کیجے سکوں فروشوں میں
وہ حُبِّ جاہ ہو یا شوقِ خُود نُمائی ہو
تمام رنگ مِلیں گے سفید پوشوں میں
یہ کون مطلعِ انوار بَن کے روشَن ہے
حواس و ہوش کے ضامنؔ تمام گوشوں میں
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s