’’بجھا جاتا ہے دل چہرے کی تابانی نہیں جاتی‘‘

دِلوں کی بات ہے، باہر بآسانی نہیں جاتی
’’بجھا جاتا ہے دل چہرے کی تابانی نہیں جاتی‘‘
الٰہی کیا سبب ہے کیوں ترے بازارِ ہستی میں
ضمیرِ حضرتِ انساں کی ارزانی نہیں جاتی
بہت خوش لوگ ہیں دامِ خِرَد سے جو کہ بچ نکلے
جنوں نا آشناؤں کی پریشانی نہیں جاتی
نہیں ہے خواہشِ منزل کا حق بھی اُس مسافر کو
کہ جس سے راہ و گردِ راہ پہچانی نہیں جاتی
وہی سب جن کے ہاتھوں آج میں اِس حال کو پہنچا
وہ جب روتے ہیں ضامنؔ، میری حیرانی نہیں جاتی
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s