بارشِ سنگ میں گئے شعلوں کے درمیاں گئے

کر کے رَقَم قَدَم قَدَم ہم نئی داستاں گئے
بارشِ سنگ میں گئے شعلوں کے درمیاں گئے
گھر سے یونہی نکل چلے، زادِ سَفَر تھے وَلوَلے
آگ لگی تَو قافلے، ہو کے دُھواں دُھواں گئے
رَقصِ اَجَل چہار سُو، وحشت و یاس کُو بہ کُو
ذکرِ نشاطِ آرزو لے کے جہاں جہاں گئے
رکّھا ہے کیا سُراغ میں ؟ لکّھا ہے داغ داغ میں
آگ لگانے باغ میں ، جب گئے باغباں گئے
شہر تَو خیر جَل چکا، آتشِ جہل! یہ بتا
کیا ہُوا اہلِ عِلم کا؟ لوگ کہاں کہاں گئے؟
ضامنِؔ قلبِ سخت کوش! کوچہ ہے یہ اَجَل بَدوش
علم و خِرَد، حواس و ہوش، کہتے اَماں اَماں گئے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s