اب تا بہ کےَ خرَد کا تماشہ دِکھائی دے

اے جذب! اے جنوں! کوئی جلوہ دِکھائی دے
اب تا بہ کےَ خرَد کا تماشہ دِکھائی دے
ہر شخص ہے تصوّرِ منزل لیے ہُوئے
منزل تو جب مِلے کوئی رستہ دِکھائی دے
مُڑ مُڑ کے دیکھتا ہُوں سرِ ریگزارِ دشت
شاید غبار میں کوئی چہرہ دِکھائی دے
پردہ تو امتحانِ نظر کا ہے ایک نام
بینا ہے وہ جسے پسِ پردہ دِکھائی دے
عہدِ شباب جانے کب آ کر نکل گیا
ہم منتظر رہے کہ وہ لمحہ دِکھائی دے
ضامنؔ سرشکِ غم میں ہے ماضی کی آب و تاب
یادیں مجھے، زمانے کو قطرہ دِکھائی دے
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s