ہنستے پھولو ہنستے رہنا

ہنستے پھولو ہنستے رہنا

تم ہو پاک وطن کا گہنا

دُھوم ہے گھر گھر آج تمھاری

خوشبو کی نہریں ہیں جاری

شاخوں نے پھر گہنا پہنا

ہنستے پھولو ہنستے رہنا

پھول ہیں تھوڑے ، خار بہت ہیں

پردے میں اغیار بہت ہیں

اپنا بھید کسی سے نہ کہنا

ہنستے پھولو ہنستے رہنا

تم ہو شہیدوں کا نذرانہ

تم کو قسم ہے سر نہ جھکانا

آپس کے دُکھ مل کر سہنا

ہنستے پھولو ہنستے رہنا

راوی اور چناب کے پیارو

جہلم ، سندھ کی آنکھ کے تارو

آج سے میرے دل میں رہنا

ہنستے پھولو ہنستے رہنا

(۱۵ نومبر ۱۹۶۵)

ناصر کاظمی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s