تیرگی ختم ہوئی

تیرگی ختم ہوئی ، صبح کے آثار ہوئے

شہر کے لوگ نئے عزم سے بیدار ہوئے

شب کی تاریکی میں جو آئے تھے رہزن بن کر

صبح ہوتے ہی وہ رُسوا سرِبازار ہوئے

جگمگانے لگیں پھر میرے وطن کی گلیاں

ظلم کے ہاتھ سمٹ کر پسِ دیوار ہوئے

ہم پہ احساں ہے ترا شہر کی اے نہرِ عظیم

تو نے سینے پہ سہے ، شہر پہ جو وار ہوئے

شاخ در شاخ چمکنے لگے خوشبو کے چراغ

عالمِ خاک سے پیدا نئے گلزار ہوئے

ناصر کاظمی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s