ستانے آ گئے موسم سہانے

پھر اُس کا ذکر چھیڑا ہے صبا نے
ستانے آ گئے موسم سہانے
تصور میں پھر اُس کی شکل چمکی
جسے دیکھے ہوئے گزرے زمانے
ذرا دیکھو تو کیا حالات بدلے
نئے لگنے لگے قصے پرانے
ہماری آنکھ کے تارے تھے جو لوگ
وہی آ کر آنکھیں لگے دکھانے
میں اکثر سوچتا رہتا ہوں باصرؔ
یہ کیا دنیا بنائی ہے خدا نے
باصر کاظمی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s