دانستہ کھڑا تھا میں ذرا سا پرے ہٹ کر

ڈرتا تھا نہ رہ جاؤں کہیں تجھ سے لپٹ کر
دانستہ کھڑا تھا میں ذرا سا پرے ہٹ کر
ہم ہی اُسے آواز نہ دے پائے وگرنہ
اُس نے تو بڑے پیار سے دیکھا تھا پلٹ کر
اب ڈھونڈنا دشوار ہے اُن کو سرِ محفل
بیٹھے تو وہ ہوں گے کسی گوشے میں سمٹ کر
باصرؔ دلِ ضدی کو تو سمجھانا ہے آخر
نرمی سے نہ مانے تو ذرا ڈانٹ ڈپٹ کر
باصر کاظمی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s