جس قیمت پر چاہیے ہم کو اُس قیمت پہ نہیں ملتی

جس کو دوائے دل کہتے ہیں یہ تو نہیں کہ نہیں ملتی
جس قیمت پر چاہیے ہم کو اُس قیمت پہ نہیں ملتی
باور کر لو سچ کہتا ہوں تم سے ملتی ہے اک شکل
آئینہ دیکھو اور بتاؤ ملتی ہے کہ نہیں ملتی
کالے بادل حائل ہو جاتے ہیں ورنہ دھوپ مری
سورج سے تو آ جاتی ہے لیکن چھت پہ نہیں ملتی
عزت چاہتے ہو باصِرؔ تو یاد رکھو میری یہ بات
نیت جب تک ٹھیک نہ ہو جاں دے کر بھی یہ نہیں ملتی
باصر کاظمی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s