احساس ہی رہا نہیں کچھ ہست و بُود کا

دل اِس قدر شکار ہُوا ہے جمود کا
احساس ہی رہا نہیں کچھ ہست و بُود کا
ہے کونسا زیاں کہ نہ ہو جس میں کوئی سُود
اور یوں زیاں ثمر نہیں کس نخلِ سُود کا
سوچو تو ہے دکھاوا چھپانے کا ایک ڈھنگ
اور پردہ داری حیلہ ہے ذوقِ نمود کا
سنتے ہیں کر لیا ہے کسی زُلف نے اسیر
منکر سدا رہا جو رسوم و قیود کا
دل کی کلی جو بند ہے باصِر تو کیا کریں
ہے کس کے اختیار میں لمحہ کشود کا
باصر کاظمی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s