فوج کا سالار پاؤں پڑ گیا

مرکزی کردار پاؤں پڑ گیا
فوج کا سالار پاؤں پڑ گیا
میں اُسے حیراں کھڑا تکتا رہا
جب وہ دُنیادار پاؤں پڑ گیا
میں غلط تھا اِس لیے پاؤں پڑا
اور وہ بےکار پاؤں پڑ گیا!
جب ٹھکانے لگ گئی عقلِ سلیم
لشکرِ اغیار پاؤں پڑ گیا
ایک نٙو سرباز موقع ملتے ہی
کھینچ کر تلوار ، پاؤں پڑ گیا!
یار! یہ ممکن نہیں سچ سچ بتا
واقعی!! سردار پاؤں پڑ گیا؟؟؟
کل مجھے خاطر میں جو لاتا نہ تھا
وہ بھی آخرکار پاؤں پڑ گیا
افتخار فلک

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s