زخم دے گئے دل کو خار پھر زبانوں کے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 15
ذِلّتوں کی بستی سے پھر نئے پیام آئے
زخم دے گئے دل کو خار پھر زبانوں کے
سامنے کی باتیں تو سامنے کی باتیں ہیں
اور بھی کچھ اِحساں ہیں ہم پہ مہربانوں کے
جبر نے دکھایا ہے پھر کہیں کمال اپنا
لوتھڑے فضا میں ہیں کچھ نحیف جانوں کے
شیر کے در آنے کے اشتباہ پر ماجدؔ
اہتمام کیا کیا تھے دشت میں مچانوں کے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s