بادل کہ نشے میں جُھومتا ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 65
پاس اُس کے بہت پئے عطا ہے
بادل کہ نشے میں جُھومتا ہے
اُن سب کا کہ سنگدل ہیں جو
ہے جو بھی ستم سو برملا ہے
بچّے کو بہت ہے ہاتھ میں گر
اُس کے کوئی ایک جھنجھنا ہے
راحت پہ مقّربان کے بھی
دیکھا ہے جسے جلا کٹا ہے
پِھر پِھرنے لگیں کسی کی نظریں
پِھر ہاتھ مرا کہیں اُٹھا ہے
ماجِد ہے کہ نیم قرن سے جو
کُچھ پائے بِناں غزل سرا ہے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s