دے شرف تخت، دے رزالت بھی

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 36
سرفرازی بھی دے خجالت بھی
دے شرف تخت، دے رزالت بھی
منصف و مدّعی ہے زورآور
آپ اپنی کرے وکالت بھی
چھُوٹتے ہی جو وار کر ڈالے
نام اُسی کے لگے بسالت بھی
ہم نے دیکھے ہیں بر سرِ عالم
قتل مِن جانبِ عدالت بھی
وہ کہ جو بے خطا ہے، اندر سے
خون کھولائے اُس کی حالت بھی
ضد ہو میزانِ عدل جب ماجد!
کیا کرے بحث کی طوالت بھی
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s