کُھلے نہیں تھے نظر پر ابھی، عتاب اس کے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 42
سرِ خیال تھے وجہِ نشاط ، خواب اس کے
کُھلے نہیں تھے نظر پر ابھی، عتاب اس کے
جو لا سکے تو فقط، خنکیٔ ہوا لائے
اِدھر جو آئے بھی، برسے ہُوئے سحاب اُس کے
اِدھر طلب میں تمّوج، اُدھر کم آمیزی
وُہی سوال ہمارے، وُہی جواب اُسب کے
غرض ہماری، ستمگر نے جان لی جب سے
چلن کُچھ اور بھی، ہونے لگے خراب اس کے
ہمیں تھے اُس سے جو پیہم، کشیدہ رُو بھی رہے
ہوئے اسیر بھی ماجدؔ، ہمیں شتاب اُس کے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

w

Connecting to %s