پُتلیوں میں سر بہ سر بیداریاں ایسی نہ تھیں

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 54
خوف سے آنکھوں میں خُوں کی دھاریاں ایسی نہ تھیں
پُتلیوں میں سر بہ سر بیداریاں ایسی نہ تھیں
شر سلیقے سے سجا، ایسا نہ رحلِ خیر پر
جیسی اب ہیں، ظلم کی دلداریاں ایسی نہ تھیں
جھوُٹ کا عفریت، یُوں سچ پر کبھی غالب نہ تھا
جابجا خلقت کی، دلآزاریاں ایسی نہ تھیں
ہاں ذرا سا زرد ہو جاتا تھا سورج، شام کو
اُس کو لاحق ہیں جو اب بیماریاں، ایسی نہ تھیں
اَب کے اپنانے لگے ماجدؔ قلم، جس طور کی
حق میں پیاروں کے کبھی، غّداریاں ایسی نہ تھیں
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s