مجرم ہمیں ہی ایک نہ ٹھہرانا چاہئے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 154
اپنے کیے پہ بھی اُنہیں پچھتانا چاہیے
مجرم ہمیں ہی ایک نہ ٹھہرانا چاہئے
ممنوع جو بھی ہے اسُے جرأت سے دیکھنا
آدم کی رِیت ہے اِسے دہرانا چاہیے
شاخوں کے درمیاں ہے جہاں حُسن کی نمو
اُس سمت بھی نظر کو کبھی جانا چاہیے
بندش سے جس کی خوں میں گرہ سی پڑی لگے
وہ لفظ بھی زباں پہ کبھی لانا چاہیے
ماجدؔ کرم وُہ جس سے بٹے کرچیوں میں دل
ہم پر کرم وُہ اُن کو، نہ فرمانا چاہیے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s