تھے جو کل یار وہ اغیار بنے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 80
رابطے جان کا آزار بنے
تھے جو کل یار وہ اغیار بنے
واہمہ ہجر کا اُس سے ملتے
جانے کیوں راہ کی دیوار بنے
ہاتھ لتھڑے تھے لہو سے جن کے
مرنے والوں کے عزادار بنے
جاں فزا کھوج تھا جن کا ماجدؔ
سب ہلاکت کے وہ اوزار بنے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

w

Connecting to %s