سیکھ بیٹھے ہم اڑانوں کے نئے انداز بھی

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 77
جس کی خواہش تھی ملا ہے وہ پرِ پرواز بھی
سیکھ بیٹھے ہم اڑانوں کے نئے انداز بھی
چپ رہے جب تک تو کلیوں سا رہا مٹھی میں بھید
مسکرانا تھا کہ ٹھہرا درد کا غمّاز بھی
ہم سے کب بے سمت نکلے لوگ لوٹائے گئے
رہ گئے تھک ہار کر بھرّا گئی آواز بھی
اپنا عکسِ نطق ہی نکلا جو دیکھا غور سے
تھا اِنہی حرفوں میں پنہاں وہ سراپا ناز بھی
وہ نگاہیں جب کبھی مضراب سی اٹھیں اِدھر
بیشتر اِس جسم کو ٹھہرا گئی ہیں ساز بھی
خاک کے پردے سے نکلے لوگ دکھلائیں تو ہم
میرؔ سا لیکن ملے ماجدؔ کوئی ہمراز بھی
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

w

Connecting to %s