چہروں پر بھی نرخ نظر آتے ہیں جہاں بازاروں کے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 103
اِس بستی میں پڑنا ہے کیا پلے ہم ناداروں کے
چہروں پر بھی نرخ نظر آتے ہیں جہاں بازاروں کے
ہم سطروں کے بیچ چھپا مفہوم ہمیں پہچانے کون
وجہِ کشش ہیں لوگ وہی عنوان ہیں جو اخباروں کے
ہم کہ نگاہ نگاہ بھی جن کی صدی صدی کی تربت ہے
ہم سے پوچھو تیور ہیں کیا اِس جگ کے آزاروں کے
اپنی ذات میں گُم سُم جیسے تیز سفر طیارے کا
جیون جس سے چھن گئے موسم سب میلوں تہواروں کے
ایک ہُوا ہے خوف یہاں ہر شخص کے اندر باہر کا
نظر نظر کے آنگن میں برپا ہیں رقص شراروں کے
جن کی اِک خواہش کا مول نہ پائیں گروی رہ کر بھی
ناز اُٹھائیں گے کیا ماجدؔ ہم ایسے دلداروں کے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s