سکھی پی رین گھر آئے ۔۔۔ ۔۔۔ ۔ گیت

سکھی نرجل گھمس انگنا گھٹا برسی، سمے بدلا

سکھی من کے اندھیروں میں جلے دیپک، بدن اجلا

نہ پگھلا جھمکے بالی کا، مہادھن رات کا پگھلا

لگی مہندی، چڑھے کنگن، بندھی جھانجر، کھُلا جوڑا

سَرَت اگنی میں جل اٹّھے ملن کی، دو برن سائے

سکھی پی رین گھر آئے

سکھی آکار پیتم کا! ہو جیوں اوتار پربھو کا!

دھلے سب پاپ سیوک کے، موہے مکتی ملی دیوا

جپوں نس دن، بنی داسی، شری کے نام کی مالا

کرے کاہے سلونی اور کسی کرتار کی سیوا

وہی اک دیوتا ساگر میں نیّا پار لنگھائے

سکھی پی رین گھر آئے

سکھی ری پیاسے ہونٹوں کو لگا امرت بھرا پیالہ

پیا کے نمر ہاتھوں نے موہے بانہوں میں یوں جکڑا

کبھی چٹکی بھری گالھو، کبھی پلّو مورا کھینچا

لکھی سنگت کے شبدوں سے سجل سنجوگ کی بپتا

کہاں توڑے سے ٹوٹے جب لگن کی گانٹھ پڑ جائے

سکھی پی رین گھر آئے

سکھی پی رین گھر آئے ۔۔۔ ۔۔

نینا عادل

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s