اس تشنگی میں ضم ہوئے کتنے خُمِ آسودگی

نینا عادل ۔ غزل نمبر 4
دل ہے سرودِ سرکشی، رقصِ جنوں ہے زندگی
اس تشنگی میں ضم ہوئے کتنے خُمِ آسودگی
اے یارِ من، اے دل ستاں، اس آبسالِ دہر میں
ہے آشنا تجھ سا کوئی نا کوئی تجھ سا اجنبی
وہ رات کی آغوش میں مدھم ستارہ خواب کا
کرتا ہے گاہے تیرگی، دیتا ہے گاہے روشنی
آب و ہوائے شوق وہ جس میں نہائیں بارشیں
سینکے ہے جس کو دھوپ خود، ہے آگ جس کو تاپتی
یا رقص اندر رقص ہو، یا نغمگی در نغمگی
یا بات جیسی بات ہو یا خامشی سی خامشی
دادِ ہنر کے واسطے روتا نہیں فن کار خوں
فن ہے خدا اس کے لیے، فن ہی حیات دائمی
ہم خواب زاروں میں بسے ہیں دو جہاں سے بے خبر
کیا دوستوں کی دوستی، کیا دشمنوں کی دشمنی
لفظ وبیاں کے درمیاں اک رنگِ نا تمثال میں
روحِ وفا کا کرب ہے نیناؔ ؔکی ساری شاعری
نینا عادل

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s