عکس اور میں

آب جُو میں اک طلسمی عکس ابھرا تھا ابھی

دہکے عارض۔۔۔آئینے میں تیز شعلوں کی ضیا

احمریں لب ۔۔۔۔ زخمِ تازہ موجِ خوں سے آشنا

تیکھے ابرو۔۔۔ کالی راتوں کا ملائم ڈھیر سا

بہتی افشاں ۔۔۔۔ جگمگاتی مشعلوں کا قافلہ

گہری آنکھیں ۔۔۔۔ دور تک منظر سہانے خواب کا

آب حو میں اک طلسمی عکس ابھرا تھا ابھی

نقرئی پانی کے جو آنچل میں جھلمل کر رہی تھی، کون تھی

حور تھی تخئیل کے رمنوں کی یا وہ جل پری تھی، کون تھی۔۔۔؟

اس پہیلی کی گرہ کھلنے سے پہلے ہی نگاہوں پر مری

ریشمیں قدموں کی آہٹ سے خلا کی سبز چلمن آگری

آب جو میں اک طلسمی عکس ابھرا تھا ابھی

یا کفِ ساحل پہ میرے نقش پا تھے اور بس

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s